سکولہای کوئٹہ ہر سال از اولنہ ہفتے مارچ باقاعدہ برای درس و تدریس واز موشنہ۔ دہ پونزدے مارچ 1995, بعد از یک سالہ ٹریننگ, پوسٹنگ مہ دہ گورنمنٹ مڈل سکول ہنہ اوڈک شود۔ صوب ساعتای نو از خانہ پیادہ طرف بازار (بس اڈہ) رئي شودوم۔ ساعتای پاؤکم دہ بلے ویگن شیشتہ طرفِ سکول رافتوم۔ تقریبن یگو چیل منٹ بعد ویگن نزدیکِ سکول ایستاد شود۔ از ویگن برو امادوم۔ طرف سکول آہستہ آہستہ پیدل رئي شدوم۔ بلے گیٹِ سکول یک ریزہ بورڈ بود بلے شی نوشتہ بود “گورنمنٹ مڈل سکول ہنہ اوڈک کوئٹہ”۔ گیٹ سکول واز بود۔ داخل سکول شدوم۔ سکول کلان نبود، ریزہ بود۔ چار کلاس طرف دیست چپ و سہ کلاسِ دیگہ طرف دیست راس بود۔ روی بروی سکول واز بود — یگو دیوال نبود۔ درختا مثلِ دیوال وری کشت بود۔ چار پنج نفر دہ مینے سکول بلے چوکیا دہ شکلِ دائرہ دہ گرمی شیشتہ و سگریٹ کشیدہ رئي بود۔ غئیدیکہ نزدیک ازونا رسیدوم سلام کدوم۔ اونا طرف مہ توخ کدہ کم حیران شود کہ ای بچے آزرہ دہ کجا امدہ مگر زود “واعلیکم السلام” گفت۔

ہیڈ ماسٹر رہ دفتر شی پرسان کدوم۔ یک استاد گفت کہ اونا فعلن نیستہ البتہ طرف یک نفر اشارہ کدہ گفت کہ اینا انچارج استہ۔ طرف ازونا رافتوم۔ آرڈر لیٹر خو اونا رہ نشان ددوم۔ اونا طرف شی توخ کد و گفت “ٹھیک ہے۔” طرفِ یک خالی چوکی اشارہ کد “اِدھر بیٹھ جائیں۔”
انچارج صاحب دیگہ استادا رہ تعارف کد۔ یک استاد گلاس چای نزدیک مہ ایشت۔ انچارچ و دو ٹیچر مقامی بود البتہ دیگہ ٹیچر پنجابی بود۔
“چار اور استاد بھی ہے مگر وہ آج نہیں آۓ ہیں۔ بہت اچھا سکول ہے ماحول بھی اچھا ہے آپ اِنجوای کرینگے،” انچارج گفت۔
“یقینن، بہت اچھا سکول ہے بہت پرسکون و سرسبز ہے،” طرفِ درختا توخ کدہ گفتوم۔
“سکول کے باہر اُس طرف” اونا اشارہ کدہ گفت “باغ میں صاف پانی کا چشمہ ہے بہت خوبصورت جگہ ہے۔”
یک قورد چای خوردوم۔ شیرینی شی بیخی زیاد بود – چای کم مگر بورہ زیاد مزہ میدد۔ تمام دوُورِ سکول درخت بود – کلان کلان درختا — تازہ بلگ کدہ بود بسیار خوب معلوم موشود۔ از بست کہ زیاد خاموشی بود شرشرِ آؤ ام میماد۔ نرم ملائم گرمی آدم رہ امند امند ٹوکور کدہ رئي بود۔
“کیا میں سکول کو دیکھ سکتا ہوں؟” طرف انچارچ توخ کدہ پرسان کدوم۔
“ہاں، کیوں نہیں،” اونا گفت۔
“شکریہ،” گفتہ از بلے چوکی بال شودوم۔
اول طرفِ کلاسہا رافتوم۔ دروازے کلاس آسمانی رنگ بود — واز بود۔ درونِ کلاس قدم ایشتوم۔ کلاس ریزہ بود۔ تقریبن برای بیست شاگردا بود۔ بلے ڈیسکای شی گرد بود۔ بے ترتیب چارٹا ہر چار طرف بلے دیوالہا لگیدہ بود۔ سیمنٹٹ سیاہ رنگ (بورڈ) بود البتہ رنگ شی از بعض جایا پوست شودہ بود و از بعض جایا کم کندہ بود۔ دو ریزہ کیلکین ام دشت۔ دیگہ کلاس رافتوم اونجی ام امی رقم بود۔ بعد ازو، طرف درختا رافتوم۔ پہلوی درختا جوی بود۔ آو شر شر کدہ مورافت۔پہلوی جوی یک کلان صاف ستھرا شیلہ بود و مینے شیلہ گول گول سنگہا دیدہ موشود۔ اُو طرف شیلہ یک کلان خاکی کوہ بود۔ بلے شی ریزہ ریزہ خاشہا و آلفہا دیدہ موشود۔ گِرد دوُور سکول درختای سیو بود و از مینے باغِ سیو یک جوی مورافت۔ درختای سیو تازہ ریزہ ریزہ نازک بلگا کدہ بود۔ ہر طرف سکول خاموشی بود۔ خدائشی سکول خوش مہ اماد و فکر کدوم کہ دہ گرمیا اینجی خوب جای پیکنک استہ۔ یک لہٰزا مینے درختا گشتہ دوبارہ طرف سکول رافتوم۔ بعد ازو قد استادا خدا حافظی کدہ طرف خانہ رئي شودوم۔
یک ہفتہ تیر شود بچہا دہ سکول نماد۔ دو ہفتہ تیر شود مگر بچہا نماد۔ یک روز از یک ٹیچر پرسان کدوم کہ بچای سکول چرا نمایہ۔
“آئینگے۔ ابھی تو سکول کھلا ہے،” اونا دہ اطمینان گفت۔
دیگہ پرسان نکدوم۔ صوبِ گاہ تقریبن ساعتای دای نم دہ سکول میمادوم۔ چای خوردہ قد استادا گپ شپ موکدوم۔ بعد ازو پہلوی جوی شیشتہ پیتاو موکدوم۔ نرم و ملائم گرمی، تنہائ، شرشرِ آو، صاف ستھرا شیلہ و پرسکون ماحول مرا زیاد طرف خو جلب کدہ رئي بود۔ دلم میخاست کہ سگریٹ بیکشوم تا ای ماحول رہ بھرپور انجوای کنوم۔ ما دہ زندگی سگریٹ نکشیدہ بودوم مگر دہ ای دہ نرم و ملائم گرمی و پرسکون ماحول ہر وقت کہ پہلوی جوی میشیشتوم طلب سگریٹ زیاد محسوس شودہ رئي بود۔
مارچ ختم شود اپریل اماد مگر بچہا دہ سکول نماد۔ ہیڈ ماسٹر ام معلوم نشود کہ دہ کجا شود۔ امو چار پنج استادا کہ دہ سکول میماد دیگا کس نمیماد۔ چای خوردہ تمام استادا سگریٹا رہ بور موکد۔ طرف از مہ صلاح میزد مگر ما موگفتوم کہ ما نمیکشوم۔ وقتیکہ نزدیکِ جوی مورافتوم طلبِ سگریٹ خود بخود زیاد موشود۔ حوصلہ کدہ میشیشتوم مگر وقتیکہ طلب زیاد موشود۔ تمام استادا رہ خدا حافظی کدہ طرف خانہ رئي موشودوم۔
دو ہفتہ بعد، یک روز یک استاد گفت کہ صوبا چند آفسرا از محکمہ تعلیم و نمائندے یونیسف دہ سکول مایہ۔ صوبای شی ساعتای نو دہ سکول رسیدوم۔ غول سکول پور از بچہا و تمام ازونا دہ سکول یونیفارم کہ سرمئي رنگ بود۔ بستای سکول ام دیدہ موشود۔ حیران شودوم کہ اچانک ایقس بچہا از کجا اماد۔ تمام بچہا دہ قطار ایستہ بود۔ سکول ہیڈ ماسٹر رہ ام دیدوم۔ قد ہیڈ ماسٹر سلام دعا کدوم۔
چند منٹ بعد، تلاوت شروع شود۔ بعد از تلاوت، بچہا پاک سر زمین پاکستان (ترانہ) خاند۔ ما یک طرف ایستہ بودوم دہ غور توخ کدہ رئي بودوم کہ ایمروز چیز کار شودہ رئیہ۔ ہیڈ ماسٹر بچہا رہ دہ غول سکول شند۔
تقریبن یگو یک گھنٹہ بعد، افسرای محکمہ قد نمائندے یونیسیف دہ سکول اماد۔ بچہا دوبارہ دہ قطار ایستاد شود۔ نمائندے یونیسف از بچہای سکول یگو چیز پرسان کد۔ بعد از پرسان جویان اونا چای خورد و بعد از چای اونا تمام شی از سکول رافت۔ بچہای سکول ام بعد ازونا خانای خو رافت۔
استادا دہ غول سکول دہ گرمی بلے چوکیا شیشت۔ سیگریٹا رہ بور کد۔ ما ام پہلوی ازونا شیشتوم۔ ہیڈ ماسٹر خدا حافظی کدہ از سکول رافت۔
“آج یہ سارے بچے اچانک کیسے آگئے؟” از یک استاد پرسان کدوم۔
“بس، یہ ساتھ میں مدرسہ ہے،” اونا دہ قراری گفت۔
“کیا مطلب؟” پرسان کدوم۔
“ہمارے سکول کے قریب ایک مدرسہ ہے اور ہمارے بچے اس مدرسہ میں پڑھتے ہیں،” اونا گفت۔
“میں نہیں سمجھا؟” گفتم۔
“میرا مطلب ہے کہ ہمارے سکول کے بچے مدرسہ میں پڑھتے ہیں اور وہی رہتے ہیں۔ ہمیں جب انکی ضرورت ہوتی ہے ہم بچوں کو مدرسہ سے سکول میں لاتے ہیں،” اونا گفت۔
“تو یہ باقاعدہ سکول نہیں ہے؟” پرسان کدوم۔
“سکول ہے۔ ہمارے بچے ادھر بھی پڑھتے ہیں اور ادھر بھی،” اونا سیگریٹ دُود کدہ گفت۔
“کیا یہاں باقاعدہ کلاسِس ہوتی ہے؟” دوبارہ پرسان کدوم۔
“ہاں ہوتی ہے مگر ہمارے بچے زیاد تر وقت مدرسے میں ہوتے ہیں۔ وہیں پڑھتے ہیں۔ وہیں کھاتے ہیں اور وہیں سوتے ہیں ہمیں جب ضرورت ہوتی ہے وہ یہاں بھی آتے ہیں،” اونا تفصیلن گفت۔
“میں نہیں سمجھا،” سر خو خرشت کدہ گفتم۔
“آپ یہاں کچھ دن رہیں گے سب کچھ سمچھ آجائے گا،” اونا دہ قراری گفت۔
دیگا پرسان نکدوم۔ چای خوردوم۔ استادا دہ پہلوی مہ سگریٹ دُود کدہ رئی بود۔ یک استاد کہ طرفِ دیستِ چپ مہ شیشتہ بود از جیب خو یک پاکٹ تھری فائیوف سگریٹ بور کد۔ سرپوشِ سگریٹ رہ واز کدہ طرف مہ صلاح زد۔ ما طرف سیگریٹ توخ کدوم سیگریٹ طرف از مہ۔ دل مہ کم لوخ لوخ کد۔ دیست خو دراز کدہ یک سگریٹ گریفتوم۔ خود شی ام یک سگریٹ گریفت۔ اونا ماچس رہ داغ کدہ طرف ازمہ آوُورد۔ ما سگریٹ رہ داغ کدہ یک آہستہ کش گریفتوم۔ گرم گرم دُود دہ دان مہ رافت۔ کم شی قورد کدوم کم شی از دان خو برو بور کدوم۔ طرف شیلہ توخ کدوم۔ شرشرِ آو دہ گوشای مہ امدہ رئي بود مثلیکہ مرا کوی کدہ رئي بود۔ از بلے چوکی بال شودوم۔ طرفِ شیلہ رافتوم۔ امند پہلوی جوی شیشتوم۔ یک کش سیگریٹ گریفتوم۔ دیگا کش زدوم۔ شرشرِ آو، صاف ستھرا شیلہ و کوہ بسیار خوب معلوم میدد۔ پرسکون ماحول، نرم و ملائم گرمی و تنہائ مینے دُودِ سگریٹ یکجای شودہ ماحول رہ پرلطف کدہ رئي بود۔ چند منٹ پہلوی جوی شیشتہ سیگریٹ رہ انجوای کدوم۔ شدت گرمی آہستہ آہستہ زیاد شودہ رئي بود۔ آوازِ استادا دہ ای دوران امند امند کم شودہ رئی بود۔
“یونس صاحب جانا نہیں ہے؟” پس پشت خو توغ کدوم یک استاد مرا آواز ددہ رئي بود۔ کالای خو ٹک ددہ بال شودوم۔ طرف استادا رافتوم۔
“میں بازار جا رہا ہوں اگر آپ نے جانا ہے میں آپ کو ڈراپ کر سکتا ہوں،” یک استاد گفت۔
“بالکل جناب میں تیار ہوں،” گفتم۔
بلے موٹر سائیکل، دہ دانِ راہ فکر کدوم کہ ای چی رقم سکول استہ کہ بچہای شی دہ مدرسہ میخانہ۔ بیخی عجیب معلوم موشود۔ دہ امی فکرا دہ بازار رسیدوم۔ استاد رہ خدا حافظی کدہ از میزان چوک پیدل طرفِ خانہ رئي شودوم۔
صوبای شی دوبارہ دہ سکول امادوم۔ بچہا نبود۔ کلاسہا خالی بود۔ استادا دہ غولِ سکول دہ گرمی بلے چوکیا شیشتہ بود چای خوردہ رئي بود۔ سلام کدہ و قد تمام چمبہ ددہ بلے چوکی شیشتوم۔ یک استاد مینے پیالہ بلے مہ چای انداخت۔ ای اولین سکول بود کہ بغیر بچہا عجیب معلوم موشود۔ سکول بود مگر بچہا نبود۔ استاد بود مگر درس و تدریس نبود۔ پوزدے اپریل بود مگر یک بچہ دہ سکول نبود۔
“آپ کے خیال میں بچے کب تک آئیں گے؟” از یک استاد پرسان کدوم۔
“آئینگے۔ آپ کو کیا جلدی ہے،” اونا سیگریٹ صلاح ذدہ دہ قراری گفت۔
دیگا پرسان نکدوم۔ سیگریٹ گریفتوم۔ داغ کدوم۔ یک کش گریفتوم۔ از بلے چوکی بال شودہ طرف درختا رافتوم۔ ایمروز تنہائ عجیب معلوم شودہ رئي بود۔ شر شرِ آؤ ام زیاد دلکش معلوم نموشود۔ نرم و ملائم گرمی بود مگر زیاد مزہ نمیدد۔ طرف سیگریٹ توخ کدوم و از خود خو پرسان کدوم کہ ما چرا سیگریٹ کشیدہ رئیوم۔ سیگریٹ رہ گل کدہ مینے شیلہ پوتاو کدوم۔ فکر کدوم کہ اگر ای سکول امیتر باشہ آدم خاہد چیز یاد بیگرہ۔ دہ یک ماہ ای سکول مرہ طرف سیگریٹ جلب کد اگر یگ مای دیگہ بیشیوم خاہد چرس ام شروع کنوم۔ کم دیگم غوُج فکر کدوم کہ ما فعلن ہر چیقس کہ یاد دروم دہ ای سکول تمام از یاد مہ مورہ۔ سکول دہ خوب جای استہ مگر ماحولِ تعلیم دہ اینجی نیہ۔ فورن بال شودوم۔ کالائ خو ٹک ددوم۔ قد استادا خدا حافظی کدہ از سکول برو امادوم۔ بلے ویگن شیشتہ سیدھا طرف بازار امادوم۔ از بازار طرف دفتر ڈائریکٹریٹ ایجوکیشن رئي شودوم۔ شناختے کوکے ما ڈپٹی ڈائریکٹریٹ ایجوکیشن بود۔ از دفتر ازونا کوکے خو ٹیلیفون کدوم کہ اینا رہ بوگی کہ ٹرانسفر مہ دہ یگو دیگہ سکول درونِ کوئٹہ شہر کنہ۔

ڈپٹی ڈائریکٹریٹ ایجوکیشن مرہ گوفت کہ دیگہ دہ ہنہ اوڈک سکول نرو اونا وعدہ کد کہ اونا تبادلے مہ مینے یک ہفتہ مونہ۔ اونا وعدے خو پورا کد و بعد ازو، ہنہ اوڈک سکول رفتو و سیگریٹ کشیدو ختم شود۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.