Zor/زور

Zor Zorيگ جاى نوشتہ بود کہ آئينگ بسيار زور درہ تقريبن ہر چيز رہ مئيدہ مونہ اگہ مئيدہ نہ تنيست چگ مونہ۔ زوری آئينگ رہ موگیہ کہ آتش درہ۔ آتش آئينگ رہ موخرہ۔ اُو رہ اَو مونہ حتہ قيافے شى تغير ميدیہ۔ زوری آتش رہ موگیہ کہ آو درہ يعنى آو آتش رہ موخرہ۔ گُل مونہ۔ خاك خاگيشتر مونہ۔ بے عزت مونہ و تمام قارِ آتش رہ دہ خاک مونہ۔

زوری آو رہ موگیہ کہ انسان درہ۔ انسان آو رہ موخرہ۔ اگہ قار شی اماد آو رہ جوش میدیہ اگہ قار شی زیاد اماد دہ مینے آوی جوش یگ کَمک چای خشک میندختہ تا آو رہ چای جور کنہ۔  عین اميتر زوری انسان رہ موگیہ کہ مرگ درہ۔ مرگ انسان رہ موخرہ۔ از پَس پَس شی مایہ تا او رہ بوخرہ۔

زوری مرگ رہ موگیہ کہ صدقہ درہ۔ صدقہ مرگ رہ ٹال ميدیہ يعنى مرگ از صدقہ دور توتا مونہ۔ اموتر کہ موش از پيشى۔

صدقہ رہ زور شی کی درہ؟ موگیہ يگ نفر استہ کہ صدقہ رہ خام موخرہ۔ صدقہ پیش ازو تسلیم استہ۔ قد سر پائیچے شی موخرہ۔ نہ دہ جان شی کالہ میلہ نہ بوٹ، پگ شی نوشی جان مونہ۔ ایقدر استاد آدم استہ کہ از بوی صدقہ موفامہ کہ صدقہ دہ کجا استہ؟ دہ کودم خانہ استہ؟ صدقہ از دست ازو آدم چند دفعہ توتا کد مگہ نہ تنیست۔ موگیہ یگ روز صدقہ دہ مسجد توتا  کد مگہ دہ اونجی گرفتہ شود۔ روزی دیگہ دہ قبرستان پوٹ شود مگہ دہ اُونجی ام زود دہ گیر اماد۔ دہ زیارت رافت، دہ مزار رافت خلاصہ ہر کار کد مگہ دہ گیر اماد — توتا نہ تنیست۔

شمو يقينن فامیدین کہ این جناب محترم کی استہ؟ اُو فقد يگ آدم شودہ میتنہ و استہ۔ نام شی یقینن خبر درین۔ ضرورتِ گوفتو ہیج نیہ۔

 چی گوفتی؟ “ملا”؟

 تو موگی کہ ملا صدقہ موخرہ؟ مہ باور ندروم۔ نہ یقین مونوم۔ بخاطریکہ ای گپِ یقین ہیج نیہ۔ کَس ام نہ باور مونہ، نہ خواہد کد۔ ای فقط بلے ملا یگ الزام استہ کہ اونا صدقہ موخرہ۔ شمو رہ دانم خدا امی گپ باور کدنی استہ؟ یقینن نہ۔ البتہ شمو اختیار خو درین۔ مو خو باور نہ مونوم۔ دہ امی دور یا وقت آیا یگو امکان استہ کہ ملا صایب صدقہ بوخرہ؟ نہ، یقینن نہ۔ چرا؟ بخاطریکہ امروز ملا صدقہ نہ موخرہ۔ اُو بیچارہ کوہنہ ملایو بود کہ صدقہ موخورد۔ خیرات موخورد۔ پيسے امام بارگاه يا قبرستان رہ موخورد۔ یادش بخیر — اُو روزا رافت۔

امروز ملا صدقہ نہ موخرہ۔ کمیشن موخرہ۔ ڈنر موخرہ۔ لنچ، بریک فاسٹ، حتہ فاسٹ فوڈ موخرہ۔ اگہ بعضم کورے شی پور نشود، خونِ مردم رہ موخرہ۔ اینی رہ موگیہ ملا  یعنی ملای جدید۔ اُو بیچارہ کوہنہ ملایو بود کہ چمای شی جَل جَل موکد کہ کئی یگو دہ خانے خو برای خیرات بیخایہ۔

البتہ گوفتہ نہ مانہ بعضی یگ عدہ ناکام ملاہا استہ کہ تا بالی خیرات موخرہ، دہ خانے مردم سپارے قرآن میخانہ، بچای مردم رہ قرآن یا نماز یاد میدیہ مگہ کامیاب ملا ای کارہا رہ نہ مونہ۔ کامیاب ملا ہالیڈے مورہ، فقط دہ روزے خاتونو مورہ، گُوررَس صیغہ مونہ، تقریر مونہ، جلسہ جلوس مونہ، اگہ بعضم مشہور نشود، بلے لاشِ بیچارہ مردم سیاست مونہ۔ اینی اَمزو یگ نشانیای کامیاب ملا استہ۔

یقین کین، مہ نہ دہ خلافِ کامیاب ملا استوم نہ دہ خلافِ ناکام ملا۔ مہ اگہ استوم فقط دہ خلاف جہالت استوم، دیگہ ہیج نہ۔

البتہ شمو رہ بوگیوم کہ ملا جاہل نیہ، نہ ازو پیش بود نہ فعلن استہ۔ کسانیکہ ملا رہ جاہل موگیہ اونا خود شی جاہل استہ۔ ملا بسیار یگ آدمِ ہوشیار، چال باز، زیرک، معاملہ شناس و مردم شناس استہ۔ خوب خبر درہ کہ چیطور سرِ مردم رہ چکر بیدیہ۔ خوب خبر درہ کہ کودم سٹوری مردم رہ گریہ میدیہ، کودم سٹوری خندہ و کودم سٹوری از جیب شی پیسہ میکندنہ۔ بسیار یگ آدم سر خلاص استہ۔ خوب خبر درہ کہ کودم آدم کودم رہ گپ خوش درہ۔ ملا واحد طبقہ استہ کہ عین مطابقِ فکرِ ڈاروِن “سروائیول آف فیٹسٹ” راہ مورہ۔ ازو خاطر اینا دہ ہر جامعہ زندہ بود و زندہ استہ بلخصوص دہ یگ جامعہ ی جاہل۔ مہ یقین دروم کہ آغای ڈاروِن بعد از دیدنِ ملا  “سروائیول آف فیٹسٹ” تھیوری رہ پیش کد۔

فقط یگ چیز دشمن ملا استہ و اُو فقط و فقط علم استہ کہ ملا و ملای فکر رہ موخرہ۔ وقتیکہ مہ علم موگیوم ای اُو علم نیہ کہ دہ کشورای اسلامی بلخصوص پاکستان، ایران، عربستان یا افعانستان استہ۔ ای علم دہ نام علم یگ بد نما داغ استہ۔ متاسفانہ کشورای اسلامی علم رہ مثلی خاتوی خو ولی جور کدہ۔ اجازہ نہ میدیہ کہ فکر کنہ، سوال کنہ، از خانہ بورو بور شونہ۔ بیچارہ علم رہ دہ مینے تنگ تاریک چادر و خانہ بند کدہ۔ بصم ضد مونہ کہ علم از مو خوب استہ اگہ خوب موبود، امروز تمام دنیا طرفِ مسلمان توغ موکد نہ طرفِ غرب۔