Gosh wa Chim / گوش و چِم

IMG_2648یگ روز قنجغے بابےخو دہ امام بارہ گاہ شیشتہ بودوم و خاندَن (مجلس) گوش موکدوم۔ مُلا صاحب نامِ یگ بزرگ ہستی رہ گرفت وگوفت کہ “در بین راس و دروغ فقط چار ناخون فرق است ۔” بعداً مُلا صاحب دستِ راس خو نشان داد  و چار ناخون خو دہ بینِ گوش و چِم خو ایشت گوفت کہ “ہر چیز کی از چِم مینگرنی راس است و از گوش میشناوی دروغ است”۔ 

 مہ باور کدوم بخاطر ازی کہ ای یگ قولِ بزرگ ہستی بود۔ دوم  وجیش ای بُد کہ مُلا صاحب عملی تجربیشم نشان  دَد۔ لہزا دہ مو وقت، عمرو ماحول ای درست معلوم موشود۔ از یگو سوال نہ کدوم کہ آیا مُلا صاحب راس موگیہ یا نہ۔ 

وقت تیر شدہ رئی بود و مہ کلان شدہ رئی بدوم۔ دئی دوران یگ گپِ دیگہ شنیدوم کہ تمام مسلمان بلے یگ خدا یقین دَرہ۔ حضرت محمد صَلّ اللہُ عَلیہِ وَاسلَم آخری پیغمبر استہ۔ بعداً شنیدوم کہ ما از فرقہ شیعہ (جعفریہ) استوم و فقط شیعہ برحق استہ ۔اسلام دینِ امن، برداشت، محبت، برادری و آشتی استہ۔ مسلمان نیک، پاکیزہ، پرہیزگار و یگ مردمِ باانصاف، با کردار، باہنر، با علم، با غیرت، باشعور، با فرہنگ و با اخلاق استہ۔ مسلمان ظلم، زیادتی، جبر حق تلفی یاد نہ دَرہ۔ مسلمان از حقوقِ ہمسایہ، اقلیت و بالخصوص از حقوق زن آگاہ استہ و ہمیشہ براے تحفظ حقوقِ ازینہا پیش پیش استہ۔ بہشت و جاندوم اَم خبر شودوم۔ دہ بارے آسمان و زمین اَم کم کم شنیدوم یعنی آسمان دہ بال استہ زمین دہ تاہ۔ خدا دہ آسمان زندگی مونہ بندہ دہ زمین۔ شنیدوم کہ تمام کائنات از خاطر پنج تن پاک و چہاردہ معصومین جور شودہ۔ خبر بدوم کہ آزرہ استوم البتہ خبر نہ بدوم آزرہ کی استہ؟ از کجا آمدہ؟ چی ثقافت دَرہ؟ تاریخ ازینہ چی استہ؟ 

Continue reading

Mother’s Day

mothers-dayIt was 7am early morning, when I woke up. I picked my mobile which was lying underneath my pillow. I switched it on. It flashed with 11th of May 2014 on the screen. The next moment, I tapped on the Facebook to check the local news. It popped up with full of Mother’s Day posts, messages, songs and videos. I couldn’t believe it. I rubbed my eyes. Scrolled up and down and saw Mother’s Day posts again.

‘Am I watching the old posts?’ I asked myself. No, I wasn’t. I tapped on the twitter account, scrolled up to get the resent tweets than scrolled down slowly to read some posts. It was also filled with the Mother’s Day posts.  I again couldn’t believe my eyes.

I left the bed, took a shower and came downstairs to the kitchen where my wife was preparing the breakfast.

Continue reading

The Car

street poleIt was approximately 2am and the temperature was about three degree Celsius accompanied by a pitch-dark chilly night. A black coloured two-seater pickup took a sharp turn and then drove slowly into a quiet, murky, dimly lit street.

The pick-up drove past the electric pole and pulled up near a house, where two men checked their guns and got out of the vehicle. One of them unloaded the pick-up’s boot while the other proceeded to climb up a 12 feet high electric pole which stood by the boundary wall of one of the houses. Upon reaching the top, the man took in the view of the house; it was a single story house with a little yard— with enough space to park a car— with maybe two rooms, a kitchen, a toilet and perhaps a bathroom.

Continue reading

The Blanket /کمبل

blanket ستمبر کی خوشگوار رات تھی وادی میں چاند آسمان پر پورے آب وتاب سے چمک رہاتھا لیکن گیا رہ سالہ پیٹر(Peter) نہ ہی چاند کی طرف متوجہ تھااور نہ ہی باورچی خانے میں ستمبر کی سرد ہوا کو محسوس کررہا تھا کیونکہ اس کی تمام ترتوجہ باورچی خانے میں میز پر پڑے ہوئے سرخ اور سیاہ رنگ کے کمبل پر تھی یہ کمبل ابو نے دادا کو تحفے  میں دیا  تھا۔۔۔ ایک جانے والا تحفہ۔ ان کا کہنا تھا کہ چونکہ دادا  گھر سے جارہے ہیں اس لئے انہوں نے کمبل کو جانے والے کا نام دیا تھا مگر پیٹر کو ابھی تک یقین نہیں آرہا تھا کہ ابو دادا کواس کمبل کے ساتھ جانے کا کہیں گے جسے اس نے آج ہی خریدا تھا اور یوں پیٹر کی اپنے دادا کے ساتھ یہ آخری شام تھی

دادا اور پوتے نے اکٹھے رات کا کھانا کھایا کھانے کے برتن دھوئے ابو اس عورت کے ساتھ باہر جاچکے تھے جس سے اس نے شادی کرنا تھی اورکچھ ہی دیر میں واپس لوٹنا تھا جب تمام برتن دھل چکے تو دادا اپنے پوتے کے ساتھ باہر آیا اور دنوں چاند کی روشنی میں بیٹھ گئے۔

Continue reading