Maymo /میمو

 

door1-300x180[2]

بیگا  پنج   بجہ دہ   یا دِم    بیدی،” اصغر خاتوئ  خو گوفت۔ 

”کجا  رَئی استے؟” زہرہ از شوی خو پُرسان کد۔

”یگ  دوست مہ از کراچی  اَمدہ خا نے اَزو موروم۔”

”خوب”

”اَم نان رہ بئیرو کہ بیخی زیاد گوشنہ اَستوم ۔”  

       یگ دو منٹ صبر کو۔”  زہرہ گفت  ” امروز  خالے شُم  قد  دو  دختر وئ خو  اَمدہ  بود۔ تمام وقت  مہ اُنا گرفت۔ از  دکان  شِیر و پیسٹری اَوُور دُوم۔  ہیج نہ شد کہ برائ  از تو دیگ  کنوم۔ دو ساعت  دہ  پیشِ اَزونا   شِیشتُوم۔ چہ کار کنوم؟ پیش ازونا بیشی یک مسًلہ نشی دیگہ مسًلہ ۔  

                                      ”چند   بجہ اَمدہ   بود؟”  

“تقریباَ 11 بجہ بود۔”   

 نان کئ  مئیری مہ از گوشنہ گی از آل تیر شدوم ۔ امروز دہ دفتر  زیاد  کار  بود۔ ہیچ   چہ  خوردہ   نشُود۔ از  یگ لبہ کار  زیاد   بُد و از دیگہ لبہ عارف اَمدہ بود۔ ہیچ   نشُود کہ قد شی چائ بُخروم۔ خُدا خبر چہ فکر  کنہ؟

 ”عارف ہوشیار آدم استہ شاید   یگو چہ  فکر نہ مونہ۔”

 ”تا  چند  بجہ نان مئیری؟ از گوشنگی  ہیچ  گپ  زدہ  نہ میتنوم۔”  

  ”بس آلی اَوُور دُوم۔”  

  ” دہ خانہ  یگو  کَس فون  کدہ  بود؟”

 نہ،  البتہ  اِمشاوَ  بابے   مہ نذر گرفتہ۔ باید اُنجی بوری۔ ما اِمروز ترکاری گوشت کدنی  بو دُوم۔ بے وقت آمدوئ خالے تو، تمام نظام  رہ اولٹہ پولٹہ کد” ۔

”اَو ، تو  چیز کار مونی،  نان کئی مئیری؟ دوئ نِم  بجہ شُود۔”

”اَوُور  دُوم۔  بور  دِست خو بُوشی۔  نان دہ خانہ مُخری  یا آتش خانہ؟”

”.دہ خانہ”

”دسترخوان و  یگ جگ آو بو بر۔ ما نان مئیروم۔ سلاد مُخری  یا  نہ؟”

نہ۔  زُود  نان بئیرو۔ بسیار مندہ  شدوم۔ از نان بعد یک ساعت خاؤ مونوم۔  پنج  بجہ  باید  خانے  لیاقت  بورُوم  نہ کہ اُو ناراض موشنہ” ۔

اصغر دسترخوان رہ آوار کد۔ زہرہ تُخم ٹماٹر  و دیروزنہ ترکاری سَوزی اَوُورد۔ آردوئ شی نانِ چشت  رہ خورد۔   بعد از نان اصغر سر خُو بلے بالشت ایشت تا آرام کنہ۔ اصغر زود  خاؤ  رفت  بخاطر کہ زیاد مندہ بود۔

دہ مستِ خاؤ  بود کہ گھنٹی  دروازہ اُو رہ از  خاؤ   بیدار  کد۔ ” زہرہ کجا  استے؟  دروازہ  رہ  چرہ  واز  نہ مونی؟” زہرہ تو رہ مُوگم، ” اصغر دہ  آوازِ  بلند گوفت  ” یگو کَس مسلسل  دروازہ  رہ گھنٹی  ذدا رئ استہ”۔

”تو  رہ  مُوگم  کجائ؟’

ما  دہ غسل خانہ استوم۔ سر خو مشروم۔” زہرہ از اٹیچڈ غسل خانہ گوفت  ”تو  خاؤ  کو۔  دہ غمِ  درگہ نہ شو۔ آر کَس  بود  واپس  مورہ۔

”بخیالم  یگو  از  خودگی استہ۔ مسلسل گھنٹی  ذدہ  رئیہ۔ ما مورُم  توغ مونوم کی استہ؟ ”

”خوب،  مرضی  تو  دیگہ۔”

اصغر چمائ  خو ملیدہ  بال شد۔ کَش کَش کدہ  طرفِ دروازہ  رافت۔ از  بے دلی  درگہ رہ  واز کد۔

اسلام و علیکم برار۔” یگ نفر  تقریباً دہ عمرِ چِہل سالہ  بود  گوفت۔

”واعلیکم اسلام،  بو بخشین نہ شناختُوم۔ کہ رہ میخائین؟”

”برار کَس  رہ نہ میخایُوم  کمک میخایُوم۔”

”اَمی وقتِ کمک خاستو  یہ؟”

”واللہ بوبخشین۔  ما مجبور استوم۔ ”

”شرم نہ دَ رے۔ جوان آدم استے خیرات میخائ۔ چار بجے  چشتِ  روز شمو  رہ کَس  کمک  نہ مونہ۔”

اصغر قار خو  رہ  دہ  قابوئ  خو گرفت۔ دروازہ  رہ  بند کد۔ واپس طرفِ خانہ رافت کہ دوبارہ  خاؤ  کنہ۔  تازہ چمائ شی گرم شود کہ ٹیلفون اَماد۔

زہرہ ،  ٹیلفون،” اصغر دہ آوازِ بلند گوفت۔

زہرہ نہ ماد البتہ آوازِ ٹیلفون  خاموش شود۔

خدایا شکر،” اصغر قد خود خو  گوفت۔

چمائ  خو دوبارہ کور گرفت۔  یگو دہ منٹ خاؤ رفت کہ ٹیلفون دوبارہ اَماد ۔ زہرہ ڈبل ڈبل کدہ ٹیلفون  رَہ گرفت۔  آوازِ  ٹیلفون وَ ڈبل ڈبلِ زہرہ ، اصغر رَ دوبارہ از  خاؤ بیدار کد۔

کہ  بود؟” اصغر پرسان کد۔

”اَئیکے  مہ بود۔”

”چہ مو گوفت؟”

”برای اِمشاوَ، شمو رہ نان خوردو خاستہ

”اَمیتر معلوم مُشہ کہ  اِم  چشت  خاؤ  نہ موشنہ۔  چند  بجہ شودہ؟”

”چار نِم  بجہ شدہ۔ نِم گھنٹہ مندہ  دوبارہ  خاؤ  میتنِن۔ دیگہ ٹیلفون  نہ  ما یہ۔  رسیور شی تا  ایشتوم۔”

”بیخی سر درد شدوم۔ کشکی خاؤ نہ موکدوم۔”

”چائ بئیروم،  سردردی شمو  رہ  خوب  مونہ۔”

” تو بورُو   چائ  بئیرو،  ما  دِست روی  خو  موشروم۔”

زہرہ طرفِ آتش خانہ رافت۔ اصغر طرفِ   دِست  روی  شوشتو۔

”آ ، آ ، آہ ،” زہرہ جیغ ذَد۔

 اصغر ڈبل کدہ  طرفِ آتش خانہ رفت۔ زہرہ بلے فرشِ آتش خانہ  دراز مندہ  بود۔

 چہ شود۔ چہ کار شود۔ دِست خو دَر دَدی؟” اصغر جلدی جلدی پرسان کد۔

”نہ”

”چہ  کار  شود   دیگہ؟”

پائ مہ  قد شود۔ پریشان نہ شو۔ آلی خوب موشنہ،” زہرہ شوی  خو رہ تسلی  دَد وَ گوفت ”از بالنہ خانے الماری  ڈبی چائ  رہ  تا  کنو”۔

ڈبی چائ  رہ چرہ بال ایشتے؟  اینِجی  تاہ  بیلو  بد مذہب  رہ ۔” اصغر دہ  قار گوفت   ”قد  تو  ریزہ  استہ ڈبی چائ  رہ  بال میلی۔  بیلُو چائ  رہ  ما  جور نوم” ۔

اصغر سرپوشِ  ڈبی چائ  رہ  واز  کد ”او  خاتُو،  ڈبی  چائ  خالی  استہ۔  چائ ختم شدہ۔  چرہ نگفتی کہ چائ میوُر دُوم؟”  اصغر دَ  قار گوفت۔

چا ئ  بُود۔ امروز خالے تُو  قد  دُخترو ئ  خو اَمدہ  بُود۔  دو دفعہ چا ئ جور کدوم۔  چائ   شِیر زیاد چائ مِگرہ  ۔۔۔۔۔۔۔

”بس بس، آلی  بانہ  بلے  خا لے مہ نکو۔ تُو باید دو  سہ  روز  پیش موگفتی کی  چائ ختم مُوشنہ۔ ۔ ۔۔ ۔ ۔ ۔”

”سہ روز پیش تُو رہ گوفتم  تُو مصروف بودی اَمزو خاطر از  یاد  تُو  رفتہ۔”

”تُو نگوفتی،  آلی  بانہ مونی۔”

”بخُدا گوفتہ دُوم،  تُو  ہیچ  نہ شنیدی۔  ما  ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔”

”باز کہ گھنٹی مِذنہ  دروازہ  رہ؟” اصغر گوفت۔

” دَ غم شی نَشو۔  یگو اللہ خیر استہ۔”

آ  وَاللہ ،   اللہ خیر  زیاد  شودہ۔ وقت  رہ  ہیج  توغ ننہ  ہر وقت کہ دل چی  شود  دروازہ  رہ  گھنٹی  مِذنہ۔  اینالی خوب شد قد گھنٹی قاطی  ٹخ  ٹخ اَم  مونہ۔ مو رُم توغ مونُوم ای کُودم پدر لانت اللہ خیر استہ۔

اصغر بسیار  دہ  قار طرفِ  دروازہ  رافت۔  دروازہ رہ واز  کد۔  میخاست کی یگو زیشت بُوگہ کہ مامائ  شی دَ  قار گفت  ”چرہ دروازہ رہ  واز  نہ مُونِن۔ از پنج منٹ کہ گھنٹی زدہ رئیُوم و ٹخ ٹخ کدا رئیُوم ، ہیچ  واز  نہ مُونِن؟

اصغر دان شی واز مند کی چہ  بُوگہ۔ 

 

 نوٹ: بہ وجہ ٹکنیکال مسائل بلے بعذی ڈائلاگہ “اِنور ٹڈ کامہ” نشان نہ مدیہ۔  

 

 

The Gift

bicylce“Are you okay?”

 The question jolted Ahmed back to the present. He looked at his wife, Fatima who was looking at him in a concerned manner. She said,

“Hello… I’m talking to you.”

Ahmed sighed and replied,

“I’m worried about the business, it’s not doing so well. What about you?”

His wife took a deep breath before saying,

“The headmistress has asked me to resign because of the threats to the school. And all the staff members want me to leave as soon as possible.”

Ahmed nodded and said,

“Well it’s a difficult time for our community. Customers have been avoiding our shop and I don’t know how to get them back.” Continue reading

Why Alamdar Road Quetta? Part-2

mwmI never thought to write the second part of the “Why Alamdar Road Quetta?” but the comments which I received on my Facebook and especially on my website, most of them didn’t get approved due to strong language, compelled me to write the second part.

I always approve the reasonable comments on my website, no matter if it’s against me but unfortunately can’t approve very strong and abusive language.

The purpose of the article was not to get favour or to slam someone but to express my concern with the community members about the extreme religious public gathering held on Alamdar Road Quetta by Majlis-e-Wahdatul Muslimeen (MWM) and broadly to analyze the possible fallout of the gathering roared against the militant groups. And further to make people aware of the dirty politics of extreme local and non-local mullahs on the pretext of religion.  Moreover, to suggest the community members to discourage such gatherings and to think seriously about their wellbeing.

I’m not going to talk about the abusive comments which I didn’t approve on my website; however, I’ll talk about the comments sent to me by the supporters of MWM to further analyze their view points. Continue reading

Why Alamdar Road Quetta?

Shuhada ConferenceMajlis-e-Wahdatul Muslimeen (MWM) arranged Shuhada Conference on Alamdar Road Quetta today, supported by Sunni Itehad Council, Pakistan People’s Party (PPP), Minhajul Quran to exert pressure on Federal government to launch military action against Taliban.

The religious leaders lambasted the policies of the federal government and expressed their anger on the members of the negotiating team to talk to Taliban.

The name of the conference was Shuhada Conference but actually it was a strong political message to federal government to launch military operation against Taliban from Alamdar Road Quetta, Pakistan.

Large numbers of Pakistanis favour military operations against Taliban, but why Alamdar Road was picked to roar against Taliban? Hazaras are already the worst victim of Taliban and its affiliated groups in Quetta. Why this conference was not held on Jinnah Road Quetta or Karachi or Lahore or Islamabad or some other parts of Pakistan? Continue reading

A Letter to God/خدا کے نام خط

letters_to_godوادی میں پہاڑی کی چوٹی پر تنہا گھر جہاں سے دریا مویشیوں کے باڑے کے ساتھ مکئی کی پکی ہوئی فصل جو ہمیشہ اچھی ہوتی تھی دلکش منظر پیش کررہا تھا ”  زمین کو ہلکی سی بونداباندی کی ضرورت ہے“۔لینکو(Lencho) کسان شمالی مشرق کی طرف سے آنے والے بادلوں کو غور سے دیکھتے ہوئے سوچتا ہے۔

”اس بار بارش ضرور ہوگی، بیگم“

”ہاں اگر اللہ نے چاہا“اس کی بیوی جو کھانے کی تیاری میں مصروف تھی جواب دیتی ہے۔

بڑے لڑکے کھیت میں مصروف تھے جبکہ چھوٹے گھر کے قریب کھیل رہے تھے اسی اثناء میں ماں کھانے کے لئے آواز دیتی ہے۔پوری فیملی کھانے میں مصروف تھی کہ بارش کے قطرے گرنا شروع ہوجاتے ہیں جس کی پیش گوئی کسان نے پہلے کردی تھی۔شمالی مشرق کی جانب سے مزید گہرے بادل آرہے تھے ہوا میں خنکی اور نمی بھی بڑھ رہی تھی کسان بارش سے لطف اندوز ہونے کے لئے مویشیوں کے باڑے کی طرف جاتا ہے اور واپسی پر آکر کہتا ہے کہ ”آسمان سے بارش نہیں بلکہ نئے سکے  (Coins) برس رہے ہیں بڑے بڑے قطرے دس سینٹ (Cent) جبکہ چھوٹے پانچ سینٹ (Cent) ……” 

Continue reading